Thursday, March 29, 2012

Mohabbat - Dynamics




تخلیق ہمیشہ محبّت سے پھوٹتی ہے. اس کو محبت ہی پال پوس کر پروان چڑھاتی ہے. پھر یہ محبت ہی کی طرف قدم بڑھاتی ہے اور اسی میں گم ہو جاتی ہے.
لیکن محبت کا دروازہ ان لوگوں پر کھلتا ہے جو اپنی انا اور اپنے نفس سے منہ موڑ لیتے ہیں. اپنی انا کو کسی کے سامنے پامال کر دینا مجازی عشق ہے. اپنی انا کو بہت سوں کے آگے پامال کر دینا عشق حقیقی ہے.
محبت جنسی جذبے کا نام نہیں. جو لوگ جنس کو محبت کا نام دیتے ہیں وہ ساری عمر محبت سے عاری رهتے ہیں. جب محبت اپنے نقطہ عروج پہ پہنچتی ہے جنس خود بہ خود ختم ہو جاتی ہے جنس سے انحراف کر کے یا اسے دبا کر اس سے چھٹکارا حاصل نہیں کیا جا سکتا. محبت میں اتر کر اس سے گلو خلاصی کی جا سکتی ہے.
محبّت کا سفر اختیار کرنے کے لیے پہلی منزل فیملی یونٹ کی ہے. جو شخص پہلی منزل تک ہی نہیں پہنچ پاتا وہ آخری منزل پر کسی صورت بھی نہیں پہنچ سکتا
فیملی اور کنبے کو قائم رکھنا محبّت ہی کی ذمیداری ہے.
محبّت کے بغیر انسان ایک فرد ہے. ایک ایگو ہے, خالی انا ہے. اس کا کوئی گھر بار نہیں، کوئی فیملی نہیں، اس کا دوسروں کے ساتھ کوئی رشتہ نہیں، کوئی تعلق نہیں. یہ بے تعلقی یہ نا رشتیداری موت ہے، زندگی تعلق ہے، رشتےداری ہے.

(اقتباس: اشفاق احمد کی کتاب "زاویہ ٣" کے باب "محبت کی حقیقت" کے صفحہ نمبر "٢٣٩" سے)


Quite amusingly it reminded me of my last night's post Life Tiptoed. Out.

Life Tiptoed. Out.


He loved her. 
But what he hated with greater intensity, were all the times he had proved to be less of a man. 

And with her came their reminders!




Thursday, March 22, 2012

Saturday, March 17, 2012

Saline Words

"Writing for me was always a great stress reliever, a way of dealing with pain." - Bret Easton Ellis

Thursday, the 15th of March 2012...

When expiration and existence came like sweeping waves, crashing over me. 
An experience whose electricity is still running through my nerves!
It was an ordinary day, a rather lazy one. My second mug of coffee was half way through when the cell beeped at 11:13 am. I glanced over the screen and found kid's school name flashing over the screen. Something just ticked a time bomb inside me. It didn't take even a second for the call to be answered.

hello?
Is this angel's mother?
Yes.
I'm angel's teacher.
Is everything ok?
Can you come to school?
Is he hurt?
Yes.
Is he bleeding?
(Pause) A little.
Is he crying?
He was. But he is settled now. He has a chocolate in his hand and we are sitting in the office.
I'll be there in 30 minutes. Could you please tell him that his mama is coming?
I will.

I had left my office before clicking 'End Call'.

What followed were the 12 longest minutes of my life! 
It took the next 12 minutes to reach his school, and a score of times I experienced extinction.


As I entered the school gate, a school staff stepped out of the Admin office across the school yard with two blood stained towels in hand. Another cessation!

I stepped in the office at 11:25am and there, just on the extreme left, there he was.



The next 4 hours I kept doubting God's capacity to grant me enough strength to enable me keep acting as the tenacious support for my son. 
I wanted to cry with him. To just hold him in my arms kissing his blood stained neck... and cry!
36 hours have eloped since then, and I still can feel the salt of the tears held back, in my throat.


But, I didn't cry.


I couldn't cry, for his confidence in  me as his support asked me to remain strong.



This is when he slept later at home. 

Do you see that tightly snuggled li'll kitty? :)

"Mama, teacher Yasmeen (his headmistress) said, when the child's parents gonna see him like this, they'll have a 'hard attack'", he revealed to me as I tucked him in the blanket.

He decided to be the 'Baba' (father) of the kitty, "bilkul jaisee ap meri mama ho" (just the kind you make my mom)


I'm not sure if it would actually be a great idea to be just like me, but I sure loved the way he snuggled the kitty in his arms.


Wednesday, March 7, 2012

Charming, Not!





میں نے انتظار کرنے والوں کو دیکھا.انتظار کرتے کرتے سو جانے والوں کو بھی اور مر جانے والوں کو بھی. میں نے مضطرب نگاہوں اور بے چین بدنوں کودیکھا ہے.آہٹ پے لگے ہوئے کانوں کے زخموں کو دیکھا.انتظار میں کانپتے ہوئے ہاتھوں کو دیکھا . منتظر آدمی کے دو وجود ہوتے ہیں. ایک وہ جو مقررہ جگہ پر انتظار کرتا ہے، دوسرا وہ جو جسد خاکی سے جدا ہو کر پذیرائی کے لئے بہت دور نکل جاتا ہے. جب انتظار کی گھڑیاں دنوں،مہینوں اور سالوں پر پھیل جاتی ہیں تو کبھی کبھی دوسرا وجود واپس نہیں آتا اور انتظار کرنے والے کا وجود،اس خالی ڈبے کی طرح رہ جاتا ہے جسے لوگ خوبصورت سمجھ کر سینت کے رکھ لیتے ہیں او کبھی اپنے آپ سے جدا نہیں کرتے. یہ خالی ڈبا کئی بار بھرتا ہے، قسم قسم کی چیزیں اپنے اندر سمیٹتا ہے، لیکن اس میں "وہ" لوٹ کر نہیں آتا جو پذیرائی کے لئے آگے نکل گیا تھا .ایسے لوگ بڑے مطمین اورپورے طور پہ شانت ہوجاتے ہیں .ان مطمئن، پرسکون اور شانت لوگوں کی پر سنیلٹی میں بڑا چارم ہوتا ہے اور انہیں اپنی باقی ماندہ زندگی اسی چارم کے سہارے گزارنی پڑتی ہے.یہی چارم آپ کو سوفیا کی شخصیتوں میں نظر آے گا.یہی چارم عمر قدیوں کے چہرے پر دکھائی دے گا اور اسی چارم کی جھلک آپکو عمر رسیدہ پروفیسروں کی آنکھوں میں نظر آے گی.


از اشفاق احمد، "سفر در سفر" سے انتخاب




And life is different when the wait is no more.