Sunday, May 25, 2014

Lazzat-e Safar


لیکن مجھے ہمیشہ اپنے اندر ایک خلا کا احساس ہوا اور باہر سناٹا ۔
اندر کی کائنات اتر کر خلا میں پہنچنے کی جستجو کرتا تھا ۔
لیکن اس کے لیے جس مراقبے اور مکاشفے کی ضرورت ہے ، اس کی ہمت نہ تھی ۔
میرا حال یہ ہے کہ درویشی کا ظرف نہ تھا ، اور دنیا داری کا سلیقہ نہپیں ۔
سو ساری زندگی رسے پر ڈولتے گذر گئی ۔
لیکن نا معلوم کو جاننے کا ایسا چسکا ہے کہ میں کبھی ڈرتے ڈرتے آہستہ آہستہ اور کبھی تیز تیز بے خوف اندر کی غار میں چھلانگ لگا لیتا ہوں ۔
کبھی کچھ ہاتھ آتا ہے کبھی خالی ہاتھ ہی لوٹنا پڑتا ہے ۔
لیکن سفر کی اپنی ایک لذت تو ہے ہی ۔ کبھی کبھی چھپ چھپ کر سب سے چوری چوری نماز پڑھنے اور اس کے نام کا چپکے چپکے ، اندر ہی اندر ورد کرنے کا بھی ایک مزہ ہے ۔ 
اس عشق کی طرح جسے چھپانے کا لطف ہوتا ہے ۔

عشق کی تشہیر بھی ایک مزہ رکھتی ہے ۔ 
اور اس کا اخفاء بھی اپنی ہی ایک لذت رکھتا ہے ۔

تمنا بے تاب "رشید امجد"

Tuesday, May 13, 2014

دامِ یقین





یہ نظم اتنے بہت سے حوالوں کے ساتھ
زندگی میں گندھی ہے
کہ اب یقین ہے کہ



گر اپنی کتھا کہتے
تو منظوم اختصار
یہی ہوتا

...

:)





مرے ہمدم، مرے دوست

گر مجھے اس کا یقیں ہو مرے ہمدم، مرے دوست
گر مجھے اس کا یقیں ہو کہ ترے دل کی تھکن
تیری آنکھوں کی اداسی، ترے سینے کی جلن
میری دلجوئی، مرے پیار سے مت جائے گی
گرمرا حرفِ تسلی وہ دوا ہو جس سے
جی اٹھے پھر ترا اُجڑا ہوا بے نور دماغ
تیری پیشانی سے دھل جائیں یہ تذلیل کے داغ
تیری بیمار جوانی کو شفا ہو جائے

گر مجھے اس کا یقیں ہو مرے ہمدم، مرے دوست

روز و شب، شام و سحر میں تجھےبہلاتا رہوں
میں تجھے گیت سناتا رہوں ہلکے، شیریں،
آبشاروں کے، بہاروں کے ، چمن زاروں کے گیت
آمدِ صبح کے، مہتاب کے، سیاروں کے گیت
تجھ سے میں حسن و محبت کی حکایات کہوں
کیسے مغرور حسیناؤں کے برفاب سے جسم

گرم ہاتھوں کی حرارت سے پگھل جاتے ہیں
کیسے اک چہرے کے ٹھہرے ہوئے مانوس نقوش
دیکھتے دیکھتے یک لخت بدل جاتے ہیں
کس طرح عارضِ محبوب کا شفاف بلور
یک بیک بادہء احمر سے دہک جاتا ہے
کیسے گلچیں کے لیے جھکتی ہے خود شاخِ گلاب
کس طرح رات کا ایوان مہک جاتا ہے
یونہی گاتا رہوں، گاتا رہوں تیری خاطر
گیت بنتا رہوں، بیٹھا رہوں تیری خاطر
یہ مرے گیت ترے دکھ کا مداوا ہی نہیں
نغمہ جراح نہیں، مونس و غم خوار سہی
گیت نشتر تو نہیں، مرہمِ آزار سہی
تیرے آزار کا چارہ نہیں، نشتر کے سوا
اور یہ سفاک مسیحا مرے قبضے میں نہیں
اس جہاں کے کسی ذی روح کے قبضے میں نہیں

ہاں مگر تیرے سوا، تیرے سوا، تیرے سوا





Saturday, May 3, 2014

Chaos Gives Birth To Dancing Stars


Emotional calm has its own price. Sometimes its swaying soul going silent.
A wonderful read that
 lucidly explains the quiet on this blog place for quite a few moons now. :)





Why Emotional Excess is Essential to Writing and Creativity



“Something is always born of excess: great art was born of great terrors, great loneliness, great inhibitions, instabilities, and it always balances them.”



The third volume of Anaïs Nin’s diaries has been on heavy rotation in recent weeks, yielding Nin’s thoughtful and timeless meditations on life,mass movements, Paris vs. New York, what makes a great city, and the joy of handcraft.



The subsequent installment, The Diary of Anais Nin, Vol. 4: 1944-1947 (public library) is an equally rich treasure trove of wisdom on everything from life to love to the art of writing. In fact, Nin’s gift shines most powerfully when she addresses all of these subjects and more in just a few ripe sentences. Such is the case with the following exquisite letter of advice she sent to a seventeen-year-old aspiring author by the name of Leonard W., whom she had taken under her wing as creative mentor. 



I like to live always at the beginnings of life, not at their end. We all lose some of our faith under the oppression of mad leaders, insane history, pathologic cruelties of daily life. I am by nature always beginning and believing and so I find your company more fruitful than that of, say, Edmund Wilson, who asserts his opinions, beliefs, and knowledge as the ultimate verity. Older people fall into rigid patterns. Curiosity, risk, exploration are forgotten by them. You have not yet discovered that you have a lot to give, and that the more you give the more riches you will find in yourself. It amazed me that you felt that each time you write a story you gave away one of your dreams and you felt the poorer for it. But then you have not thought that this dream is planted in others, others begin to live it too, it is shared, it is the beginning of friendship and love.



[…]



You must not fear, hold back, count or be a miser with your thoughts and feelings. It is also true that creation comes from an overflow, so you have to learn to intake, to imbibe, to nourish yourself and not be afraid of fullness. The fullness is like a tidal wave which then carries you, sweeps you into experience and into writing. Permit yourself to flow and overflow, allow for the rise in temperature, all the expansions and intensifications. Something is always born of excess: great art was born of great terrors, great loneliness, great inhibitions, instabilities, and it always balances them. If it seems to you that I move in a world of certitudes, you, par contre, must benefit from the great privilege of youth, which is that you move in a world of mysteries. But both must be ruled by faith.

Originally from: http://www.brainpickings.org/index.php/2012/09/03/anais-nin-on-emotion-and-writing/


PS:
“You must have chaos within you to give birth to a dancing star.”
- Friedrich Nietzsche